اہم خبریںبین ریاستی خبریںراجستھان

اجمیر درگاہ میں مندر کے دعوے کی سچائی: احاطے میں سواستیکا کے نشان نہیں ملے، جو تصویر دکھائی گئی ویسی جالی تک نہیں، پڑھیں قومی ترجمان کی خصوصی پیشکش

راجستھان : وارانسی میں گیانواپی مسجد کے بعد اب راجستھان میں اجمیر درگاہ شریف کو ہندو مندر ہونے کا دعویٰ کیا گیا ہے۔ اس سلسلے میں اجمیر میں سیکورٹی بڑھا دی گئی ہے۔ ایک تنظیم نے سواستیکا کے نشان کے ساتھ تصاویر شیئر کیں۔ بتایا گیا کہ یہ جالی درگاہ شریف میں ہے۔ اس علامت کی بنیاد پر کہا گیا کہ یہ ہندو مندر ہے۔

روزنامہ بھاسکر نے درگاہ شریف جا کر جانچ پڑتال کیا۔ یہاں ٹیم کو بزرگ حضرت خواجہ معین الدین حسن چشتی کی درگاہ کے کسی بھی حصے میں ایسی جالی نہیں ملی جس پر سواستیکا کا نشان ہو۔ نہ ہی ایسے پتھر ملے تھے، جیسا کہ مہارانا پرتاپ آرمی آرگنائزیشن کی طرف سے جاری تصویر میں دیکھا گیا ہے۔

راجستھان حکومت نے کچھ عرصہ قبل ایک پراجیکٹ کے تحت درگاہ کے نظام گیٹ، اکبری مسجد اور کوئین میری ہوز کی ہیریٹیج شکل کو واپس کر دیا تھا۔ ان عمارتوں میں کہیں بھی کسی پتھر میں ایسی کوئی علامت یا نشان نہیں ملا۔ دینک بھاسکر کی ٹیم جمعرات کی رات درگاہ پہنچی اور پورے احاطے کی تلاشی لی۔ اس میں جو حقیقت سامنے آئی وہ یہ تھی۔

نظام گیٹ: یہ درگاہ کا مرکزی دروازہ ہے۔ اس پر سنگ مرمر کے جال ہیں۔ ان پر کوئی سواستیکا نشان نہیں ہے۔ اکبری مسجد: یہ مسجد شہنشاہ اکبر نے بنوائی تھی۔ دیواروں پر ایرانی طرز کے نقش و نگار ہیں۔ کوئی سواستیکا علامت نہیں ہے۔

گنبد شریف یعنی آستانہ شریف : آستانہ شریف کے چاروں طرف سنگ مرمر کی خوبصورت جالیاں ہیں۔ یہ جال بھی ان پتھروں کے نہیں ہیں جو مہارانا پرتاپ سینا کی وائرل تصویر میں نظر آ رہی ہے ۔ نہ ہی یہاں اتنے بڑے پتھر ہیں۔

بلند دروازہ : بلند دروازہ مضبوط اور بڑے پتھروں سے بنا ہے۔ ان پتھروں پر کہیں بھی جالی نہیں ہے۔ اور نہ ہی ان پتھروں پر کوئی مذہبی علامت نظر آتی ہے۔

تنظیم نے دعویٰ کیا – ہندو مندر ہے درگاہ

جمعرات کو مہارانا پرتاپ سینا کی ایک تنظیم نے عظیم صوفی بزرگ حضرت خواجہ معین الدین حسن چشتی کی درگاہ کو جو ہندوستان کے قومی اتحاد کی سب سے بڑی نشانی ہے ہندو مندر بتا کر سنسنی پیدا کردی۔

اس تنظیم کے قومی صدر راج وردھن سنگھ پرمار نے بھی راجستھان کے وزیر اعلیٰ کو ایک میمورنڈم بھیجا ہے، جس میں انہیں خبردار کیا گیا ہے کہ وہ درگاہ کا سروے کرائیں، ورنہ وہ خود ہزاروں حامیوں کے ساتھ اجمیر پہنچ جائیں گے۔

خط میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ درگاہ کے اندر کھڑکیوں اور کئی مقامات پر ہندو مذہبی نشانات ہیں جن میں سواستیکا کا نشان نمایاں ہے۔ یہ دعویٰ کچھ ہی دیر میں وائرل ہو گیا۔ دوسری طرف درگاہ سے وابستہ نمائندوں نے ایس پی سے شکایت کی ہے۔ دھمکی کے بعد ضلعی پولیس اور انتظامیہ الرٹ موڈ پر ہے۔

اے ڈی ایم سٹی بھاونا گرگ، ایڈیشنل ایس پی ویبھو، سی او راماوتار اور دیگر پولیس افسران نے درگاہ احاطے کے اندر اور باہر کا معائنہ کیا۔ درگاہ کی سیکیورٹی کے لیے پولیس کی اضافی نفری تعینات کر دی گئی ہے۔ سی آئی ڈی زونز اور دیگر سیکورٹی ایجنسیاں بھی الرٹ موڈ پر ہیں۔

افواہیں پھیلانے والوں کے خلاف کارروائی کی جائے۔

آل انڈیا قومی یکتا کمیٹی کے صوبائی صدر ڈاکٹر اے ایس خان بھارتی اور ضلع صدر بدر الدین قریشی نے وزیراعلیٰ اشوک گہلوت کو کلکٹر کے ذریعے میمورنڈم سونپ کر مذہبی مقامات کے خلاف افواہیں پھیلانے والوں پر سخت کاروائی کا مطالبہ کیا ہے ۔

تصویر : مہارانا پرتاپ سینا کی طرف سے جاری کردہ تصویر جو اصل میں بے بنیاد ہے

درگاہ دیوان نے اس کی مذمت کی ہے ۔درگاہ دیوان سید زین العابدین علی خان نے بھی مذمت کی ہے۔ دیوان نے بیان جاری کیا کہ خواجہ صاحب کے مزار پر تمام مذاہب کے لوگ آتے ہیں۔ یہاں سے امن اور محبت کا پیغام پہنچتا ہے۔ انجمن یادگار کے صدر سبحان چشتی نے بھی اس کی مذمت کی ہے۔

درگاہ کمیٹی کو بدنام کرنے کی سازش

صدر امین پٹھان نے کہا کہ درگاہ شریف گنگا جمنی تہذیب کا مرکز ہے اور ہندوستان کے تمام مذاہب اور فرقوں کے لیے مقدس اور عقیدہ کی جگہ ہے۔ درگاہ کو اس طرح بدنام کرنا ایک بہت بڑی سازش ہے جس کا مقصد صرف جھوٹ اور انتشار پھیلانا ہے۔

تصویر : بلند دروازہ

انجمن صدرگاہ کے خادموں کی مرکزی تنظیم انجمن سید جدگان کے صدر حاجی سید معین حسین چشتی نے اسے بے بنیاد اور بے بنیاد قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس طرح کی افواہوں سے کروڑوں لوگوں کے عقیدت و ایمان متزلزل ہوتا ہے۔

ساڑھے آٹھ سو سال سے غریب نواز کا دربار ہے۔ یہاں ہر دور میں ہر دور کے حکمران آئے اور سر جھکاتے رہے ہیں۔

خدام اس دربار سے یعنی غریب نواز کی زندگی سے جڑے ہوئے ہیں ۔ خواجہ صاحب کے دربار میں %70 لوگ ہندو مذہب سے آتے ہیں۔ وہ منت مانتے ہیں اور منت پوری ہونے پر شکرانہ پیش کرنے آتے ہیں۔سیکرٹری سید واحد حسین انگارشاہ نے کہا کہ ملک بھر میں کچھ لوگ سرگرم ہیں جو امن نہیں چاہتے۔

قومی ترجمان
قومی ترجمان
Qaumi Tarjuman
قومی ترجمان

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button